CLINICAL FORM PLEASE FILL

CLINICAL FORM PLEASE FILL
ہیپاٹائٹس مخصوص علاج: تازہ سفید مشروم 10 گرام روزانہ تین بار کھائیں 100گرام تازہ انگورکوآدھا لیٹر پانی میں ابال کرجب نصف پانی سے کم رہ جائے روزانہ اسکو تین دفعہ کر کے پیئں ہیپاٹائٹس میں غذائی ٹانک جڑی بوٹیاں 1جنسینگ2 ایلفالفا3 رئمیز اوفئکانا 4 اچاناکیا پرپوریا ہیپاٹائٹس سی کے مریض کے لۓ اکسیر ہو میو پیتھک اور غذا ئی علاج Carduus Marianus کآردووس مآریانوس Ceanothus کینوتوس Chenanthusچاننٹہوس Chelidonium چالادونیوم تازہ جڑی بوٹیاں اور سبزیاں گاجر؛ادرک کی جڑ؛لال پیاج؛لہسن؛دھنیا؛اجمود؛گوبھی (سرخ اور جامنی)؛ چقندر ؛پودینہ؛ایلو ویرا کا پانی پھل سیب؛اورینج ؛ لائم؛نیبو؛ مصالحہ جات لونگ؛ تلسی؛اجوائن؛ٹکسال

Sunday, October 20, 2013

خربوزہ، گردے اور پیٹ کے امراض کیلئے مفید


خربوزے کے غذائی اجزاء
خربوزے میں بے شمارغذائیت ہوتی ہے۔ آدھا کلو خربوزے میں دو روٹیوں کے برابر غذائیت ہوتی ہے۔ خربوزے میں پانی، فاسفورس، کیلشیم، پوٹاشیم، کیرےٹین، تانبا، گلوکوز اور وٹامن ”اے‘‘ اور ”بی“ پائے جاتے ہیں۔ جسم مضبوط بنانے اور موسمی تپش کا مقابلہ کرنے والا وٹامن ”ڈی“ بھی اس میں وافر مقدار میں پایا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ گوشت بنانے والے روغنی اور نشاستہ دار اجزاء بھی اس میں پائے جاتے ہیں۔ 100گرام خربوزے میں 21 حرارے، ایک گرام پروٹین، 5گرام نشاستہ اور ایک گرام ریشہ ہوتا ہے۔ یہ تمام اجزاء انسانی جسم کو مضبوط اور صحت مند بناتے ہیں۔ میٹھے خربوزے کا مزاج گرم تر، ترش خربوزہ سرد تر اور پھیکا خربوزہ معتدل مزاج رکھتا ہے۔ تندرست معدے کے حامل لوگ خربوزے کو ڈیڑھ دو گھنٹے میں ہضم کرلیتے ہیں جبکہ ٹھنڈے مزاج کے بوڑھے اسے ہضم کرنے میں تین چار گھنٹے لگاتے ہیں اور انہیں ڈکار آتے رہتے ہیں۔

https://www.facebook.com/pages/Homeopathynutritionherbs/138439162917723


خربوزہ، گردے اور پیٹ کے امراض کیلئے مفید

No comments:

Post a Comment